’’لوگ جس طرح خان صاحب کے ساتھ کھڑے ہیں۔۔۔؟‘‘، شیریں مزاری نے بڑی بات کردی

اسلام آباد(رم نیوز) اسلام آباد ہائیکورٹ میں سماعت کے موقع پر پی ٹی آئی رہنما شیریں مزاری کا کہنا تھا ہم نے کسی پر غداری کا مقدمہ نہیں کیا جو صحافی گرفتار ہوئے خان صاحب نے ان کو فوری طور پر رہا کروایا، ہماری اسمبلی میں بہت باریک اکثریت تھی۔ہمارا جبری گمشدگی کا بل اسمبلی سے منظور ہوا لیکن سینیٹ میں پھنس گیا تھا، تبدیلیاں کرنے کی ہماری اکثریت نہیں تھی، لوگ جس طرح خان صاحب کے ساتھ کھڑے ہیں، دو تہائی تو کیا الیکشن میں سویپ کریں گے۔

پی ٹی آئی رہنما شیریں مزاری نے تعزیرات پاکستان میں بغاوت کی دفعہ 124 اے کیخلاف درخواست دائر کی ہے۔اس میں اسلام آباد سمیت چاروں صوبوں کے آئی جی پولیس اور چیف سیکریٹری کو فریق بنایا گیا ہے۔موقف اپنایا گیا کہ بغاوت کی دفعہ 124 اے اظہار رائے کی آزادی سلب کرنے کیلئے استعمال کی جارہی ہے۔تنقید اور اظہار رائے کو دبانے کے لئے بغاوت کے مقدمات کا سہارا لیا جاتا ہے۔ استدعا کی گئی کہ بغاوت کی دفعہ 124 اے غیر قانونی قرار دیا جائے۔